شاعر اور شاعری

طارق عزیز کی پنجابی شاعری سے انتخاب:

ربِّ کریم

ایسے اسم سکھا دے سانوں
ہرے بھرے ہو جائیے
گہرے علم عطا کر سانوں
بہت کھرے ہو جائیے

رَبِّ اَرِنی

اَج دی رات میں کلّا وَاں
کوئی نئیں میرے کول
اَج دی رات تے میریا ربّا
نیڑے ہو کے بول

سچّا شرک

دُور پرے اَسمان تے
رَب سچّے دا ناں
ہیٹھاں ایس جہان وِچ
بس اِک ماں اِی ماں

بلوچا وے۔ ۔ ۔

جے کوئی میرے جیہا ملے تاں
اوس نال پیار ودھاویں ناں
اوس دے درد ونڈھاویں ناں
اوس نوں اِنج تڑفاویں ناں
اوّل میرے جیہے کسے نال
پیار دی پینگ ودھاندے نئیں
جے تقدیریں اکھ لڑ جاوے
فیر او اکھ چروندے نئیں
ساری حیاتی اوس بندے نوں
اپنے دلوں بھلاؤندے نئی

( جاری ہے)

ایک دن
ان لہو میں نہائے ہوئےبازوؤں پہ
نئے بال و پر آئیں گے
وقت کے ساتھ سب گھاؤ بھر جائیں گے
ان فضاؤں میں پھر اس پرندے کے نغمے بکھر جائیں گے
جو گرفتِ خزاں سے پرے رہ گیا
اور جاتے ہوئے سرخ پھولوں سے یہ کہ گیا
مجھ کو ٹوٹے ہوئے ان پروں کی قسم
اس چمن کی بہاریں میں لوٹاؤں گا
بادلوں کی فصیلیں چراتا ہو
امیں ضرور آؤں گا
میں ضرور آؤں گا۔ ۔ ۔