اس تحریر پر 25 تبصرے کئے گئے ہیں


  1. یہ تو وہی بات ہوئی کہ نشے میں ٹن مسافر ائیر ہوسٹس سے پوچھ رہا ہو۔
    یہ حلال ہے نا؟
    ویسے میں ایرانی اور ترکش ڈونر کی شاپ سے بالکل نہیں کھاتا کہ
    کلُ حلالہ ہی کہتے ہیں خنزیر کو بھی حلال کہہ دیتے ہیں۔ وجہ ایک ہی ہے ترکی پھر بھی بہتر ہیں کسی ایرانی کوبھوک کے وقت خنزیر کھانے سے پرہیز کرتے نہیں دیکھا اگر پوچھ لیا جائے کہ بھائی خنزیر کیوں کھاتا ہے تو دارلحرب کا کہہ کر منہ موڑ کر ٹھونسنا شروع ہو جاتا ہے۔جرمن ترکش کا بھی مشاہدہ کچھ اسی طرح ہوا۔،،مچھلی سبزی کھا لیں یا تصدیق کرکے کافروں کی دکان سے کچھ بھی سبزی کھا لیں۔

    Reply

    1. گوشت کھانے کا حل یہ ہے کہ ہر کسی سے لے کے نہ کھایا جائے۔ بڑے شہروں میں سرٹیفائڈ حلال فروش مل ہی جاتے ہیں، جہاں سے لے آئیں اور خود پکا کر کھایا جائے۔ اپنے ہاتھ کا پکا کھا کر ایک دن آپ خود ہی سبزی خور بن جائیں گے۔ :ڈ

      Reply
  2. سعود

    صحیح ترجمانی کی آپ نے بالخصوص آخری جملہ

    Reply

    1. آخری جملہ تو ایک لطیفے کی حیثیت رکھتا ہے یہاں۔ لیکن بہت سوں کا ذاتی تجربہ ہے۔

      Reply
  3. رضوان خان

    انگلینڈ کی طرح جرمنی میں پاکستانیوں کی قصائی کی دکانیں نہیں ہیں۔جرمنی میں بڑے شہروں میں مقیم پاکستانیوں کی اکثریت گوشت ترکیوں کی دکانوں سے لیتے ہیں۔بقول آپ کے محض اس خاطر کہ بیچنے والا مسلمان ہے تو شاید گوشت بھی حلال (اسلامی طریقے سے ذبحہ کیا گیا) ہوگا۔لیکن اس گوشت کی حلال ہونے کی حیثتیت بذات خود مشکوک ہے۔
    ہم کو معلوم ہے جنت کی حقیقت لیکن
    دل کے بہلانے کوغالب یہ خیال اچھا ہے

    آپ کے آخری جملے سے میں اتفاق کرتا ہوں، گوشت تو حلال لیں گے کیوں کہ اسلامی احکام کی تعمیل کرنی ہے لیکن باقی حرام کام شوق سے کریں گے۔ شراب شوق سے پئیں گے، ڈسکو بھی جائیں گے اور گوری چمڑی دیکھ کر رال بھی ٹپکائیں گے، چوری سے بھی باز نہیں آئیں گے۔

    ایک ایسے شخص کو جانتا ہوں جس نے داڑھی رکھی ہے، ہاتھ میں ہر وقت تسبیح ہوتی ہے، نمازبھی پڑھتا ہے، روزے بھی رکھتا ہے، گوشت بھی حلال کھاتا ہے۔ اس نے جھوٹے میڈیکل سرٹیفیکیٹ بنا کر آگے پیش کئے ہیں کہ میں بیماری کی وجہ سے کام کے لئے ان فٹ ہوں لہذا میں کام نہیں کرسکتا۔سرکاری فلاحی ادارہ اس کے گھر کا کرایہ ادا کرتا ہے اور اسے ضروریات زندگی کے لئے چھ سات سو یورو نقد دیتا ہے۔اس مرد مومن نے پھر اسی گھر میں دو کرایہ دار ڈال رکھے ہیں جن سے کرایے کی مد میں بھی پیسے بٹورتا ہے۔ جب اس سے اس تضاد کے بارے میں کہا جائے کہ بھائی یہ جو تم کر رہے ہو یہ حرام ہے، اس کا نہ آپ کا مذہب اجازت دیتا ہے نہ اس ملک کا قانون۔۔۔ تو آگے سے کہتا ہے کہ یہ گورے لوگ کافر ہیں میں ان کو اس طریقے سے نقصان پہنچا رہا ہوں۔

    ایک اور نے ایک مہینے کی میڈیکل رخصت کے لئےاپنے ایمپلائیرکو جھوٹا میڈیکل سرٹیفیکیٹ محض اس لئے پیش کیا تاکہ وہ برکتوں سے فیضیاب ہونے کے لئے رمضان کا مہینہ گھر پر گزار سکے۔اور حلال گوشت کھا سکے۔

    ہمیں گوشت حلال یا مردار، داڑھی چھوٹی یا بڑی، پائینچے اوپر یا نیچے، میں تو اسلام یاد آتا ہے لیکن اپنے معاملات میں اور اپنے اعمال میں اسلام کو کیوں بھول جاتے ہیں ؟؟؟

    یہ کیسا دوغلا پن ہے ؟؟؟

    Reply

    1. اس دوغلے پن کی داستانیں تو جا بجا بکھری ہوئی ہیں۔ ہر دوسرا بندہ جو سوشل بینیفٹ لے رہا ہے، وہ یا تو جھوٹ بول رہا ہے یا پھر ویلےپن کی عادت کا شکار ہو چکا ہے۔ کسی دن اس پر بھی ہلکی سی روشنی ڈالنے کی کوشش کروں گا۔ بڑا ہی عجیب چکر ہے یہ۔

      Reply

  4. بہت اچھا لکھا عمیر، اس مسئلے کا سب سے بہترین حل گاندھی صاحب والا ہے یعنی کہ ’کل وقتی سبزی خور‘ بن جائیں :) یہ مشکل تو بہت ہوگا لیکن حلال کے لیے اس سے بہترین حل نہیں ہے۔ گوشت کے چٹخارے کے لیے مچھلی استعمال کی جا سکتی ہے جیسا کہ برادر یاسر جاپانی نے مشورہ دیا۔

    بہرحال، اب آیا ہوں تو ایک تصحیح کرتا چلوں کہ یہ ’ڈونر کباب‘ نہیں ہوتا بلکہ ’دونر کباب‘ ہوتا ہے کیونکہ ترکی میں ”ڈ“ کی آواز ہی نہیں ہوتی۔

    Reply

    1. فہد بھائی جرمن تو ڈال بول لیتے ہیں ناں۔ میں نے اس کا جرمن نام لکھا ہے۔ :پ ط:
      تصحیح کا بہت شکریہ۔ باقی یہ گاندھی جی والا کام ذرا نہیں کافی مشکل ہے۔ تمام مسلمانوں میں ایک ہی چیز تو کامن ہے کہ وہ گوشت کے شوقین ہوتے ہیں۔۔۔!

      Reply

  5. آپ ٹینشن نہ لیں، ادھر کل حلال ہے، ویسے تو پاکستان میں‌بھی سب حلال ہے ہر وہ چیز جس پر آپ کا قبضہ ہے، اور ادھر پاکستان سے باہر چونکہ قبضہ کا رواج نہیں ادھر ہر وہ چیز حلال ہے جس پر آپ کی دسترس ہے۔ ہیں‌جی۔ ہر وہ مال

    Reply

    1. یعنی کہ آلس حلال ہے۔ پاکستان میں تو سب ہے ہی حلال، وہاں کی کیا بات ہے۔ بقول طارق عزیز:
      گناہ ثواب دے وہم نے، کجھ وہ کرن نہ دتا
      زندہ رہن دے سہم نے، چج نال مرن نہ دتا

      Reply
      1. خلیل

        محترم یہ شعر کِس شاعر کا ہے؟
        گناہ ثواب دے وہم نے، کجھ وی کرن نہ دتا
        زندہ رہن دے سہم نے، چج نال مرن نہ دتا

        Reply
          1. خلیل

            بہت شکریہ:
            اب تو اوپر شعر کے ساتھ بھی لکھا دکھائی دینے لگاا ہے۔


  6. عمیر بھیا خوشی ہوئی اتنے عرصہ بعد ایک مثبت تحریر پڑھ کر۔ پھر مزید خوشی کی بات یہ کہ آپ نے احتیاط کرنی شروع کی اور اُمید ہے کہ مستقبل میں بھی ایسے ہی احتیاط کرتے رہیں گے اِس نازک صورتَ حال میں۔
    جہاں تک بات ہے مسلمانوں کی لاپرواہی کی تو یہ افسوسناک بات کوئی نئی نہیں۔۔۔ رضوان خان بھیا نے بھی دُرست کہا کہ ہم اپنے مفاد کے وقت اسلام کو بھول جاتے ہیں اور اپنے عمل پر توجہ نہیں دیتے۔۔۔ بس یہی تو ہمارے وہ اعمال ہیں جسکی بنا پر آج پورا عالمِ اسلام تنکے کی مانند بے وزن ہوگیا اور ہم اللہ کے عزابات کا شکار ہونے لگے

    Reply

    1. بھیا جی ہماری تو ساری زندگی ہی احتیاط ہے۔ ہم تو جینے سے بھی پرہیز کرتے ہیں۔۔۔ ل و ل ز
      خیر بہت شکریہ کمنٹنے کا۔ مذہب کو اپنے مقصد کیلئے استعمال کرنا ہماری عادت بن چکی ہے۔

      Reply

      1. دیکھنا زیادہ احتیاط بھی خطرناک ہوجاتی ہے اکثر۔۔۔
        جی بالکل چاہئیے تو یہ تھا کہ مزہب کی مان کر چلتے لیکن مزہب سے اپنی منوانے لگے ہیں

        Reply

  7. حلال اور حرام کا چکر بس نہ پوچھیں، ایک ویب سائٹ دیکھی تھی اس کو پڑھنے کے بعد ہر چیز پر حرام کا گمان ہوتا ہے پر کیا کیا جائےکہ زندہ بھی رہنا ہے اور وہ بھی چٹخارے لے کر :(

    Reply

    1. ویب سائٹ کا لنک نہ فراہمنے کا بہت شکریہ۔ کبھی کبھی میں کہتا ہوں کہ نا آشنائی کا بھی مزہ لینا چاہیئے۔!

      Reply

  8. او بھائی ، پہلے یہ بتا کہ یہ بلاگ حلال ہے کہ نہیں ؟ ادھر اُدھر جانداروں کی تصاویر لگا رکھیں تو نے۔
    لگتا ہے پردیس گئے چند ہی مہینے ہوئے جو صرف گوشت ہی پر پھنسا ہوا۔
    ادھر ٹافی چیونگم میں بھی جیلی ٹن ہے۔ بولے تو سور کی ہڈیوں گا گودا
    مچھلی بعض اوقات وائن میں‌ تلی جاتی ہے۔ ہن کرو گل۔۔
    ہم تو رًم میں تیار شدہ کیک بھی دیکھ چکے ہیں۔
    اور بتاؤں یا کافی ہے ؟

    Reply

    1. بس تین ہی مہینے ہوئے۔ :)
      جیلاٹن سے بہت خوف آتا ہے۔ منحوس ہر مزے کی چیز میں ہوتی ہے۔ بعض اوقات والی مچھلی میں نہیں کھاتا۔ اکثر اوقات والی ویجیٹیبل آئل میں ہی تلتے ہیں ناں۔ کیک میں الکحل کا سنا ہے۔ اسی لئے تازہ نہیں لیتے، بلکہ کمپنی کا تیار شدہ انگریڈیئنٹس دیکھ کے کھا لیتے ہیں۔ اب پتا نہیں رم کو جرمن میں کیا کہتے ہیں؟ ویسے ایک کیک غیر معمولی طور پہ مزیدار تھا!!
      میری چیونگم میں سویا لیسیتھین اور پتا نہیں کیا الا بلا ہے لیکن جیلاٹن نہیں لکھا ہوا۔
      ”سور سے ڈر نہیں لگتا صاحب، جیلاٹن سے لگتا ہے!“

      Reply
  9. سعود

    بیرونِ ملک ایک طبقہ ایسا بھی دیکھا جن کو جب تک پتا نا ہو کہ یہ چیز حرام ہے تب تک ان کے لیے ہر شے حلال ہوتی ہے۔

    Reply

    1. چھین لے مجھ سے حافظہ میرا!
      ان کیلئے تو یہی کہنا بنتا ہے بس۔۔ ویسے نا آشنائی بھی ایک نعمت ہے۔

      Reply

dr iftikhar Raja کو جواب دیں جواب ترک کریں

بے فکر رہیں، ای میل ظاہر نہیں کیا جائے گا۔ * نشان زدہ جگہیں پُر کرنا لازمی ہے۔ آپکا میری رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں، لیکن رائے کے اظہار کیلئے شائستہ زبان، اعلیٰ کردار اور باوضو ہونا ضروری ہے!۔ p: